الہام

Urdu Poetry Wallpaper

Urdu Poetry Wallpaper

کام، ناکام ہوا کرتے ہیں

لوگ، گمنام ہوا کرتے ہیں

چوٹ، سینے پہ لگا کرتی ہے

شعر، الہام ہوا کرتے ہیں

نعیم اکرم ملک

 

کچھ کچا پکا کلام۔۔۔

(1)

تجھ  سے  لڑ  کر  جیتا  ہوں

سولی  چڑھ   کر   جیتا  ہوں

پیچھے   رہ  کر   ہارا   تھا

آگے   بڑھ   کر   جیتا   ہوں

(2)

پلک  جھپک  میں  کھو  سکتا  تھا

 ایسا   کچھ   بھی   ہو   سکتا  تھا

جگراتوں     کا     مارا     مجرم

سولی  پر  بھی   سو   سکتا   تھا

بنجر    آنکھوں     والا     پنچھی

آخر    کیسے    رو    سکتا   تھا؟

(3)

بیٹھے   بیٹھے   سر   کٹ   جاتے

کم  از  کم  کچھ  پر   کٹ   جاتے

ایسے   جیون   سے   بہتر   تھا

جا   کر   مقتل   پر   کٹ   جاتے

(4)

سمع   کا   دھوکا،   بصر   کا   دھوکا

عروج    پر    ہے   بشر   کا   دھوکا

فتح   کا   دھوکا،   نصر   کا   دھوکا

تمام    تیری     نظر     کا     دھوکا

آخری قطعہ میں تلفظ کا غلط استعمال کیا گیا تھا۔ توقیر عباس شاہ صاحب نے درستگی فرمائی، اسلئے ان پر لکیر پھیر رہا ہوں۔

گزشتہ کافی دنوں سے یہ چند نا مکمل غزلیں میرے ذہن میں تھیں، کسی صورت مکمل ہوتی نہ دکھیں تو میں نے ایسے ہی آپکی خدمت میں پیش کر دیں۔۔۔

مترنم غزلیں

ویڈیوز کی کوالٹی فارغ سی ہے، موبائل سے بنائی ہیں۔۔۔ کمرے میں روشنی بھی بس ٹھیک ہی تھی۔۔۔ بہر حال۔۔۔ ویڈیوز تو اپ لوڈ کر دی نا۔۔۔ کوئی دو ہفتے پہلے لکھی ہوئی غزلوں کو روک کے رکھنا اب میرے لئے خاصا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔ غزلوں کا ٹرانسکرپٹ ذیل میں درج ہے۔۔۔

میں  نے  پوچھا  سوال، کیسا  ہے؟

کچھ   بتا    تیرا   حال، کیسا    ہے؟

روز و شب کس طرح  گزارے  ہیں؟

اب     جہانِ     خیال     کیسا    ہے؟

تھا   تجسس  مجھے  پتہ  تو  چلے

تیرا   حسن   و   جمال   کیسا    ہے؟

اور پھر! کیسی    ہے    انا    تیری؟

تیرا    جاہ    و    جلال   کیسا   ہے؟

الجھا    الجھا    دکھا ئی دیتا   ہے

کس  نے  جکڑا  ہے، جال   کیسا   ہے؟

چھوڑ  جائوں  یہ  تری  خواہش  تھی

بھول    بھی    جا ملال    کیسا    ہے؟

گر    یقیں    ہے    میری    محبت   پر

لوٹ       آنا       محال،  کیسا      ہے؟

 

بس گردشِ دوراں سے ہی فرصت نہیں مِلی

ایسا  تو  نہیں  ہے  کہ  محبت   نہیں   ملی

گو دِل پذیر  لوگوں  سے  بھی  واسطہ  رہا

جو  دِل  پہ  گزر  جائے، قیامت   نہیں   مِلی

ہم  نے  حسین  چہروں  کی تاریخ چھان دی

لیکن  وفا   کی   کوئی   روایت   نہیں   مِلی

پھر  آج تعجب سے مجھے اُس نے یہ پوچھا

او  نعیم!   تیری   کوئی   شکایت   نہیں   مِلی

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے
ایک ہیجان چھپا بیٹھا ہے
اِس دمکتے ہوئے کاشانے میں
قصرِ ویران چھپا بیٹھا ہے

کیا خبر سُوٹ بُوٹ کے پیچھے
کیسا انسان چُھپا بیٹھا ہے
بن کے ایاز تیری محفل میں
دیکھ سُلطان چھپا بیٹھا ہے

خیر و شر کا تمام اِس دِل میں
ساز و سامان چھپا بیٹھا ہے
دیکھ کر تجھکو یقیں ہوتا ہے
تجھ میں بھگوان چھپا بیٹھا ہے

اٹھ گئی جگنوئوں سے پابندی
تو کہ انجان چھپا بیٹھا ہے
ایک اک جُنبشِ ابرو میں نعیم
لاکھ فرمان چھپا بیٹھا ہے

 

معذرت چاہتا ہوں، وقت کی کمی کے باعث اشعار کی فارمیٹنگ الائنمنٹ درست نہیں کر سکا۔

دائرے میں بھنور میں رہتے ہیں

دائرے میں، بھنور میں رہتے ہیں
لوگ جو اس نگر میں رہتے  ہیں
منزلوں   کا    نشاں    نہیں   ملتا
جانے  کیسے سفر میں رہتے ہیں

ہوش    ان     کو    مگر    نہیں    آتا
کس   دوا   کے   اثر  میں  رہتے  ہیں؟
منتشر      منتشر       خیال       انکے
شام  میں،  اور  سحر  میں  رہتے ہیں

سنگ    باری    کا    شوق    پالا    ہے
اور  شیشے  کے  گھر  میں  رہتے  ہیں

کچھ حقیقت ہے، کچھ فسانہ ہے

کچھ  حقیقت  ہے،  کچھ  فسانہ  ہے
یہ   بڑا    ہی   عجب   زمانہ   ہے

سارے    اعمال    دشمنوں   والے
صرف     انداز     دوستانہ     ہے

دیکھنے   میں‌   نئی   عمارت   ہے
اسکے    اندر    سبھی   پرانا   ہے

جانے  کب  دل  میں  اتر جاءے گا
آنکھ  میں  جس  کا  آنا   جانا   ہے

کیا  خبر  کون  یاد  رہ  جاءے
کیا پتہ کس کو بھول جانا  ہے

دل جلاتا ہے، بھول جاتا ہے

دل  جلاتا  ہے،  بھول  جاتا  ہے
آزماتا   ہے،   بھول    جاتا   ہے

مجھ  سے  وہ دور رہ نہیں سکتا
پاس  آتا   ہے،  بھول   جاتا  ہے

میری  حالت  کو  دیکھ  کر   اکثر
مسکراتا  ہے،  بھول   جاتا    ہے

اُس  پری زاد  کی  خاصیت   ہے
ترس  کھاتا  ہے،  بھول جاتا  ہے

ساتھ رہتا  ہے  گیت  الفت  کے
گنگناتا   ہے   بھول   جاتا  ہے

لوٹ آنے کے سبھی وعدوں کو
دور  جاتا  ہے،  بھول  جاتا ہے

کافی عرصے بعد تازہ غزل پیش خدمت ہے، ہر شاعر پر "شاعرانہ قبض” کا ایک دور آتا ہے اور اس دور میں وہ بیچارہ یا بیچاری کچھ بھی نہیں لکھ پاتا۔ میں بھی اُنہی ایام سے گزر رہا ہو۔ اللہ کا شکر ہے کہ ایک غزل لکھی گئی، اللہ کرے مزید بھی لکھ سکوں۔

اپنے قدموں کے نشاں دیکھتا ہوں

اپنے قدموں کے نشاں دیکھتا ہوں
وقت  لے  آیا   کہاں   دیکھتا  ہوں
جیت   اور   ہار   کے  تقابل  میں
سود  کو چھوڑ زیاں  دیکھتا  ہوں

آس  جب  ٹوٹ  پھوٹ  جاتی  ہے
پھر سے جذبات جواں دیکھتا ہوں
دیر  سے  سفر  کئیے   جاتا   ہوں
دور  منزل  کا  نشاں  دیکھتا  ہوں

اب  تو  انجم  بھی  قریں  لگتے  ہیں
اِک  نرالا   ہی   جہاں   دیکھتا   ہوں
وہ   جو   کل   پاس   ہوا   کرتا   تھا
گرد    میں   آج   نہاں   دیکھتا   ہوں

قافلہ     اجل     کے     پروانوں     کا
موج   در   موج   رواں   دیکھتا   ہوں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

منظرِ عام تک نہیں پہنچا

منظر      عام      تک      نہیں     پہنچا
جُرم     الزام     تک      نہیں      پہنچا

ایک    خاکہ    سا   ہے   خیالوں   میں
شخص   سے    نام   تک   نہیں   پہنچا

ذہن    الجھا    ہوا    ہے   لفظوں   میں
اصل     پیغام     تک      نہیں     پہنچا

جان   بخشی   کا   کوئی   بھی    حیلہ
میرے     ابہام     تک     نہیں     پہنچا

تیری  محفل  میں  جو  بھی  دور  چلا
تشنئہ     کام     تک     نہیں      پہنچا

دِل کو  اب  بھی  اُمید  ہے  تجھھ  سے
دیگر    اصنام     تک     نہیں     پہنچا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

ہجر کاٹا وصال دیکھیں گے

ہجر   کاٹا    وصال   دیکھیں   گے

تیرے   سارے  کمال  دیکھیں   گے

آنکھھ میں آنکھھ  ڈال  دیکھیں  گے

جو  بھی   آیا   وبال  دیکھیں   گے

سامنے   ہم   تجھے   بٹھائیں   گے

خوب  تیرا   جمال   دیکھیں    گے

تیری  اُلجھی لٹوں سے کھیلیں  گے

چہرہء   بے   مثال    دیکھیں    گے

شام  کو   صبح   کو    بہانوں    سے

تیری  مستانہ    چال     دیکھیں    گے

سانس  رُک   سا   گیا   تھا  سینے  میں

اِسکو   پھر   سے   بحال   دیکھیں   گے

بات   جو   کہتے   ہو   وہ    مانیں    گے

کر     کے    اپنا    خیال    دیکھیں     گے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

« Older entries