جل پری

جل پری

جل پری

وہم ہونا خیال ہونا تھا

زندگی کو سوال ہونا تھا

تو مثالیں سنایا کرتا تھا

آپ تجھ کو مثال ہونا تھا

کس نے سوچا تھا عشق میں اک دن

نعیم تیرا یہ حال ہونا تھا

جل پری کے نصیب ایسے تھے

سارے دریا کو جال ہونا تھا

 نعیم اکرم

نوٹ: ایک شعر توقیر عباس شاہ صاحب کی تصحیح کی وجہ سے حذف کیا گیا ہے۔

Advertisements

کچھ کچا پکا کلام۔۔۔

(1)

تجھ  سے  لڑ  کر  جیتا  ہوں

سولی  چڑھ   کر   جیتا  ہوں

پیچھے   رہ  کر   ہارا   تھا

آگے   بڑھ   کر   جیتا   ہوں

(2)

پلک  جھپک  میں  کھو  سکتا  تھا

 ایسا   کچھ   بھی   ہو   سکتا  تھا

جگراتوں     کا     مارا     مجرم

سولی  پر  بھی   سو   سکتا   تھا

بنجر    آنکھوں     والا     پنچھی

آخر    کیسے    رو    سکتا   تھا؟

(3)

بیٹھے   بیٹھے   سر   کٹ   جاتے

کم  از  کم  کچھ  پر   کٹ   جاتے

ایسے   جیون   سے   بہتر   تھا

جا   کر   مقتل   پر   کٹ   جاتے

(4)

سمع   کا   دھوکا،   بصر   کا   دھوکا

عروج    پر    ہے   بشر   کا   دھوکا

فتح   کا   دھوکا،   نصر   کا   دھوکا

تمام    تیری     نظر     کا     دھوکا

آخری قطعہ میں تلفظ کا غلط استعمال کیا گیا تھا۔ توقیر عباس شاہ صاحب نے درستگی فرمائی، اسلئے ان پر لکیر پھیر رہا ہوں۔

گزشتہ کافی دنوں سے یہ چند نا مکمل غزلیں میرے ذہن میں تھیں، کسی صورت مکمل ہوتی نہ دکھیں تو میں نے ایسے ہی آپکی خدمت میں پیش کر دیں۔۔۔

انتہائوں کے بیچ زندہ ہوں

انتہائوں      کے     بیچ     زندہ     ہوں

کچھ  خدائوں  کے  بیچ    زندہ     ہوں

کوئی      انساں     نظر     نہیں     آتا

بس  انائوں   کے    بیچ    زندہ    ہوں

داستانوں   میں   سنا    کرتے    تھے

جن   بلائوں   کے   بیچ   زندہ   ہوں

معجزہ    اور   کسے    کہتے   ہیں؟

بد   دعائوں   کے    بیچ    زندہ   ہوں

کل  مداروں  سے  دشمنی  کی  تھی

اب   خلائوں  کے  بیچ   زندہ   ہوں

نعیم    بینائی    چھن     گئی     میری

ضو  فشائوں  کے  بیچ   زندہ     ہوں

نعیم اکرم ملک

مترنم غزلیں

ویڈیوز کی کوالٹی فارغ سی ہے، موبائل سے بنائی ہیں۔۔۔ کمرے میں روشنی بھی بس ٹھیک ہی تھی۔۔۔ بہر حال۔۔۔ ویڈیوز تو اپ لوڈ کر دی نا۔۔۔ کوئی دو ہفتے پہلے لکھی ہوئی غزلوں کو روک کے رکھنا اب میرے لئے خاصا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔ غزلوں کا ٹرانسکرپٹ ذیل میں درج ہے۔۔۔

میں  نے  پوچھا  سوال، کیسا  ہے؟

کچھ   بتا    تیرا   حال، کیسا    ہے؟

روز و شب کس طرح  گزارے  ہیں؟

اب     جہانِ     خیال     کیسا    ہے؟

تھا   تجسس  مجھے  پتہ  تو  چلے

تیرا   حسن   و   جمال   کیسا    ہے؟

اور پھر! کیسی    ہے    انا    تیری؟

تیرا    جاہ    و    جلال   کیسا   ہے؟

الجھا    الجھا    دکھا ئی دیتا   ہے

کس  نے  جکڑا  ہے، جال   کیسا   ہے؟

چھوڑ  جائوں  یہ  تری  خواہش  تھی

بھول    بھی    جا ملال    کیسا    ہے؟

گر    یقیں    ہے    میری    محبت   پر

لوٹ       آنا       محال،  کیسا      ہے؟

 

بس گردشِ دوراں سے ہی فرصت نہیں مِلی

ایسا  تو  نہیں  ہے  کہ  محبت   نہیں   ملی

گو دِل پذیر  لوگوں  سے  بھی  واسطہ  رہا

جو  دِل  پہ  گزر  جائے، قیامت   نہیں   مِلی

ہم  نے  حسین  چہروں  کی تاریخ چھان دی

لیکن  وفا   کی   کوئی   روایت   نہیں   مِلی

پھر  آج تعجب سے مجھے اُس نے یہ پوچھا

او  نعیم!   تیری   کوئی   شکایت   نہیں   مِلی

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے
ایک ہیجان چھپا بیٹھا ہے
اِس دمکتے ہوئے کاشانے میں
قصرِ ویران چھپا بیٹھا ہے

کیا خبر سُوٹ بُوٹ کے پیچھے
کیسا انسان چُھپا بیٹھا ہے
بن کے ایاز تیری محفل میں
دیکھ سُلطان چھپا بیٹھا ہے

خیر و شر کا تمام اِس دِل میں
ساز و سامان چھپا بیٹھا ہے
دیکھ کر تجھکو یقیں ہوتا ہے
تجھ میں بھگوان چھپا بیٹھا ہے

اٹھ گئی جگنوئوں سے پابندی
تو کہ انجان چھپا بیٹھا ہے
ایک اک جُنبشِ ابرو میں نعیم
لاکھ فرمان چھپا بیٹھا ہے

 

معذرت چاہتا ہوں، وقت کی کمی کے باعث اشعار کی فارمیٹنگ الائنمنٹ درست نہیں کر سکا۔

یومِ اقبال مبارک۔۔۔

فرشتوں کا گیت

عقل ہے بےزمام ابھی،  عشق  ہے  بے مقام ابھی

نقش   گرِ   ازل   ترا   نقش    ہے    ناتمام    ابھی

خلقِ  خد ا کی  گھات  میں رِند و فقیہہ و میر و پیر

تیرے جہاں میں ہے وہی گردش صبح و شام ابھی

تیرے امیر   مال   مست،تیرے فقیر   حال   مست

بندہ   ہے  کوچہ  گرد ابھی،خواجہ  بلند  بام ابھی

دانش   و  دین  و  علم  و  فن، بندگیء  ہوس تمام

عشق  گرہ  کشاے  کا  فیض  نہیں  ہے  عام   ابھی

جوھرِ  زندگی  ہے عشق، جوھرِ  عشق  ہے خودی

آہ   کہ   ہے   یہ   تیغِ   تیز،   پردگیء   نیام   ابھی


مُلا اور بہشت

میں  بھی  حاضر  تھا  وہاں  ضبطِ  سخن  کر  نہ   سکا

حق   سے   جب   حضرتِ   مُلا   کو   مِلا   حُکمِ  بہشت

عرض   کی   میں   نے   الٰہی    مری    تقصیر    معاف

خوش  نہ  آئیں  گے  اسے  حور  و شراب و  لبِ کشت

نہیں    فردوس    مقامِ     جدل    و    قال    و     اقوال

بحث   و  تکرار  اس   اللہ   کے   بندے   کی    سرشت

ہے    بدآموزیء    اقوام    و    مِلل    کام     اس    کا

اور  جنت   میں   نہ   مسجد،   نہ   کلیسا،   نہ   کُنِشت


روحِ ارضی آدم کا استقبال کرتی ہے

کھول   آنکھ،زمیں   دیکھ، فلک   دیکھ، فضا   دیکھ

مشرق  سے  ابھرتے  ہوئے  سورج  کو  ذرا  دیکھ

اُس  جلوہء  بے  پردہ  کو  پردوں  میں  چھپا  دیکھ

ایّامِ      جدا ئی      کے     ستم    دیکھ،جفا    دیکھ

بے تاب نہ ہو معرکہء بیم و رِجا دیکھ

ہیں  تیرے  تصرف  میں  یہ  بادل، یہ   گھٹائیں

یہ      گنبدِ     افلاک، یہ     خاموش      فضائیں

یہ    کوہ، یہ    صحرا، یہ   سمندر، یہ   ہوائیں

تھیں  پیشِ  نظر  کل  تو  فرشتوں کی    ادائیں

آئینہ  ایام  میں  آج  اپنی  ادا  دیکھ


سمجھے  گا  زمانہ  تیری  آنکھوں  کے  اشارے

دیکھیں گے تجھے دور سے گردوں کے ستارے

ناپید      تیرے      بحرِ      تخیل    کے     کنارے

پہنچیں  گے  فلک  تک  تری  آہوں  کے  شرارے

تعمیرِ  خودی  کر،اثرِ   آہِ رسا  دیکھ

خورشیدِ    جہاں   تاب کی   ضو   تیرے   شرر    میں

آباد     ہے    اک    تازہ    جہاں     تیرے    ہنر     میں

جچتے     نہیں    بخشے   ہوئے   فردوس   نظر   میں

جنت   تری   پنہاں    ہے    ترے    خونِ    جگر     میں

اے  پیکرِ  گِل  کوششِ  پیہم کی جزا دیکھ

نالندہ    تیرے    عود    کا    ہر    تار    ازل    سے

تو     جنسِ     محبت     کا    خریدار     ازل    سے

تو     پیرِ     صنم     خانہء     اسرار     ازل    سے

محنت   کش   و   خونریز   و   کم   آزار   ازل   سے

ہے  راکبِ  تقدیر جہاں تیری رضا دیکھ

یہ تمام غزلیں علامہ محمد اقبال کی آخری اردو کتاب بالِ جبریل سے لی گئی ہیں۔ بالِ جبریل کے بعد علامہ کی شاعری کے مجموعہ جات فارسی زبان میں ہیں۔

اس بلاگ پر اپنی شاعری کے علاوہ شعر و ادب سے متعلقہ دیگر مواد بھی رکھوں؟

 

آپ کی رائے کا احترام کیا جائے گا۔۔۔ یا کم از کم ایسا کرنے کی کوشش کی جائے گی۔۔۔

فہم و ادراک سے بالا کیوں ہے؟

فہم و ادراک سے بالا کیوں ہے؟
تیرا   انداز   نرالا   کیوں   ہے؟

کیوں جبیں چاند سی چمکتی ہے؟
اور آنکھوں میں اجالا کیوں ہے؟

نام  کس  کے  ہے  جوانی  تیری؟
خود کو اس قدر سنبھالا کیوں ہے؟

دائرے میں بھنور میں رہتے ہیں

دائرے میں، بھنور میں رہتے ہیں
لوگ جو اس نگر میں رہتے  ہیں
منزلوں   کا    نشاں    نہیں   ملتا
جانے  کیسے سفر میں رہتے ہیں

ہوش    ان     کو    مگر    نہیں    آتا
کس   دوا   کے   اثر  میں  رہتے  ہیں؟
منتشر      منتشر       خیال       انکے
شام  میں،  اور  سحر  میں  رہتے ہیں

سنگ    باری    کا    شوق    پالا    ہے
اور  شیشے  کے  گھر  میں  رہتے  ہیں

کچھ حقیقت ہے، کچھ فسانہ ہے

کچھ  حقیقت  ہے،  کچھ  فسانہ  ہے
یہ   بڑا    ہی   عجب   زمانہ   ہے

سارے    اعمال    دشمنوں   والے
صرف     انداز     دوستانہ     ہے

دیکھنے   میں‌   نئی   عمارت   ہے
اسکے    اندر    سبھی   پرانا   ہے

جانے  کب  دل  میں  اتر جاءے گا
آنکھ  میں  جس  کا  آنا   جانا   ہے

کیا  خبر  کون  یاد  رہ  جاءے
کیا پتہ کس کو بھول جانا  ہے

« Older entries Newer entries »