فہم و ادراک سے بالا کیوں ہے؟

فہم و ادراک سے بالا کیوں ہے؟
تیرا   انداز   نرالا   کیوں   ہے؟

کیوں جبیں چاند سی چمکتی ہے؟
اور آنکھوں میں اجالا کیوں ہے؟

نام  کس  کے  ہے  جوانی  تیری؟
خود کو اس قدر سنبھالا کیوں ہے؟

Advertisements

بس عشق تیرے کا رونا ہے

بس عشق تیرے کا رونا ہے
اور   ہمیں   کیا   ہونا   ہے
کیا    پانا   کیا   کھونا   ہے
یہ  اوڑھنا،  یہی بچھونا ہے

تیری یادوں سے مہک رہا
کمرے  کا  کونا  کونا  ہے
اب کھیلتا ہے کل توڑے گا
دِل  اپنا  کوئی   کھلونا   ہے

تیرے آنسو ایسے موتی ہیں
ناممکن  جنہیں   پِرونا   ہے
چل نعیم نہیں کوئی اور سہی
تُو   ہو  جا  جسکا  ہونا  ہے

ایک تازہ زمین ڈھونڈتا ہوں

ایک     تازہ    زمین    ڈھونڈتا   ہوں
کوئی  تجھ  سا  حسین  ڈھونڈتا   ہوں
جسکی   پیشانی   پہ   تارے   چمکیں
کہکشاں    کا    مکین    ڈھونڈتا  ہوں

خامشی    کی    صدا    سمجھتا    ہو
شخص   مخلص  فطین  ڈھونڈتا  ہوں
ڈھوندنے  سے  خُدا  بھی   ملتا   ہے
کر کے  خود   پر  یقین  ڈھونڈتا  ہوں

میرے   رازوں   کو   امانت   رکھے
ایک   صادق    امین    ڈھونڈتا   ہوں

جواب نصیحت

جواب نصیحت

جانے دے شور  مچاتا  کیوں  ہے
چُپ بھلا مجھکو کراتا  کیوں  ہے
عقل کے گھوڑے بھگاتا کیوں ہے
خاک   اسقدر   اُڑاتا   کیوں   ہے

دشت میں شہر بسا لوں گا میں
حوصلہ  میرا  گھٹاتا کیوں ہے
آنکھ میں خواب سجا لینے دے
آنکھ میں آگ  لگاتا  کیوں  ہے

بڑی محنت سے جہاں  چھوڑا  ہے
پھر مجھے اس سے مِلاتا کیوں ہے
میں  نے  مانا  تو  میرا  محسن  ہے
بات  بے    بات   جتاتا   کیوں   ہے

 نیند   آنی   ہو  تو  آ  جاتی  ہے
مجھ  پہ   الزام  لگاتا  کیوں  ہے
زخم جتنے بھی میرے گہرے ہیں
جا کے اوروں کو بتاتا  کیوں  ہے

چھوڑ دوں کیسے جو ہو گزری ہے
یاد  رکھنے  دے  بُھلاتا  کیوں   ہے
نعیم   کے   دوست   آفریں  تجھ  پر
دشمنی   مجھ سے نبھاتا   کیوں  ہے

دشت میں شہر بساتا کیوں ہے

نصیحت

دشت   میں  شہر  بساتا   کیوں  ہے
آنکھ میں خواب   سجاتا   کیوں  ہے
حالِ  دِل   مجھکو  سناتا   کیوں  ہے
جو   گیا    اُسکو   بُلاتا   کیوں   ہے

چند  لمحے   کو   تو  سو  لینے   دے
رات بھر  رو  کے  جگاتا  کیوں  ہے
مانا  کہ   زخم    تیرے    گہرے  ہیں
بے وجہ مجھ  کو  دکھاتا   کیوں  ہے

بات  کڑوی  ہے مگر غور  سے  سُن
آنکھ اب  مجھ  سے  چُراتا  کیوں  ہے
دوست   یہ    شعر   بڑی   دولت   ہیں
کور   نظروں    پہ   لُٹاتا   کیوں   ہے

چھوڑ  بھی،   ہو گیا   جو   ہونا   تھا
اب   بھلا    بات   بڑھاتا   کیوں   ہے
نعیم  میں   دوست   ہوں    تیرا    پاگل
مجھکو  غیروں  میں  مِلاتا  کیوں ہے

یہ میری آخری تحریر نہ ہو

یہ   میری   آخری   تحریر   نہ   ہو
آج    مرنا    میری    تقدیر    نہ   ہو
روزِ  اول   سے   ہی   ویران   رہے
ایسی   کوئی   کہیں   تعمیر    نہ   ہو

آنکھ  وہ   خواب   سدا   دیکھتی   ہے
جسکی   ممکن   کبھی   تعبیر   نہ  ہو
موت    کا    آنا    اک    حقیقت    ہے
بے   سبب   شاعرا   دلگیر   نہ    ہو

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

قطعات

قطعات

1
قید    میں   زندگی   گزارتے   ہیں
قرض   یوں    کونسا   اُتارتے   ہیں؟

عمر  بھر  گھر  سے  دور رہ رہ کر
کیا  بگاڑا  تھا،  کیا   سنوارتے   ہیں؟

2
خاک  میں  خون  کہاں  چھپتا  ہے
آنکھ  میں   آنسو   کہاں   رُکتا  ہے

آندھیوں   کے   بُرے   زمانے   میں
ٹوٹتا   جو   نہیں   وہ   جُھکتا   ہے

3
درد  جو  دِل  میں  ہے  پھیلا  دوں  گا
سارے  عالم   کو   دِل   بنا   دوں   گا

منہ  چھپاتے  پھرو  گے خود سے بھی
آئینہ   جب   کبھی    دکھا    دوں    گا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

میں سمجھتا رہا کہ یہ رباعیات ہیں۔ جبکہ یہ تو قطعات ہے۔ معلومات میں اس اضافے کے لئے میں محمد وارث صاحب کا شکر گزار ہوں۔ وارث صاحب کا بلاگ ملاحظہ ہو
muhammad-waris.blogspot.com

ایک غزل، ہمارے آج کے نام

ایک غزل، ہمارے آج کے نام

دور   رہتے   ہیں   پرے    رہتے    ہیں

لوگ   لوگوں   سے   ڈرے   رہتے  ہیں

موت   کا   خوف   ہے  لیکن  پھر  بھی

سارے    بازار   بھرے     رہتے    ہیں

روح   کا  کیا    ہے    اِسے    قتل  کرو

جسم   کے   دام    کھرے    رہتے   ہیں

کام    پہ    عمر      گزر    جاتی    ہے

طاق  میں   خواب   دھرے   رہتے  ہیں

وقت   کے    ساتھ   بہے    جاتے    ہیں

گویا   جیتے    جی    مرے   رہتے  ہیں

نعیم   گلشن    میں    خزاں    آ   جاءے

آس     کے    پیڑ    ہرے    رہتے   ہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

پہلے والی بات نہیں ہے

پہلے    والی    بات      نہیں     ہے
بادل    ہیں    برسات      نہیں     ہے

ہجر   بھری    ہے     بپتا      ساری
وصل  کا  دِن  اور   رات   نہیں  ہے

ذرّہ   ذرّہ      بکھر       رہا     ہوں
کچھ   بھی    میرے   ہات   نہیں ہے

عشق   نہ   کھیل  نہ   سودے   بازی
جیت    نہیں   ہے،  مات   نہیں   ہے

دھوپ   میں   آ   کر   ہم   نے   جانا
سایا  تک    بھی    ساتھ    نہیں   ہے

مٹی   میں   سب    مِل    جائے    گا
لوگوں     کو      اثبات     نہیں     ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

محبت کو بچانا ہے

محبت         کو        بچانا        ہے
تمہیں     سب     کچھ       بتانا    ہے
جسے     ڈر       کر       دبایا      تھا
وہی        نقطہ       اٹھانا         ہے

کٹھن      یہ        آزمائش           ہے
مجھے     خود     کو     ہرانا      ہے
عبادت        گاہِ         الفت          سے
ہر     اِک     بُت     کو     ہٹانا      ہے

جو     میرے        پاس     باقی     ہے
سبھی      تم       پر        لٹانا        ہے
محبت         کو            مٹاتا         ہے
بڑا          ظالم            زمانہ        ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

« Older entries