ٹھگ

apple-love-heart-poetry-Punjabi

 ایہہ سب توں وڈا ٹھگ سجنا

نہ دل دے آکھے لگ سجنا

یا تیریاں گلاں سچیاں نیں
یا جھوٹا سارا جگ سجنا

وچ دوزخ ہر کوئی کھڑدا اے
بس اپنی اپنی آگ سجنا


یا عرشاں اتے لا ڈیرا
یا مل میری شہہ رگ سجنا


نعیم اکرم ملک

وسوسہ

وسوسہ

میری تازہ غزل، وسوسہ۔

پریشانیاں اور دکھ شاعر کو اندر سے کھا جاتے ہیں لیکن اگر یہ چیزیں نہ ہوں تو شاید کوئی اچھا شعر بھی کہہ نا پائے۔

چوٹ پڑتی ہے تو آواز آتی ہے۔ اور فنکار عام آدمی سے ذرا زیادہ حساس ہوتے ہیں اسلئے انکی آواز بھی زیادہ آتی ہے۔

سر اُٹھاتا ہے وسوسہ صاحب
جان لیواہے مرحلہ صاحب
وہ جو اِک پھول تھا، گیا مُرجھا
جو ستارہ تھا، بُجھ گیا صاحب
کاٹتا ہے یہاں پہ ہر کوئی
اپنے حصے کا رتجگا صاحب
بات دِل میں رکھی نہیں جاتی
بول دیتے ہیں برملا صاحب
ایک دوجے کے ساتھ چلتے ہیں
راستہ، موت، حادثہ صاحب
نعیم اکرم

غزل – فرصت و اختیار کے دِن تھے

فرصت و اختیار کے دِن تھے

کتنے اچھے بہار کے دِن تھے

وہ جو شامیں حسین شامیں تھیں

وہ جو دِن تھے، خمار کے دِن تھے

آپکے ساتھ ہوا کرتے تھے

قربت و افتخار کے دِن تھے

نعیم اکرم

الہام

Urdu Poetry Wallpaper

Urdu Poetry Wallpaper

کام، ناکام ہوا کرتے ہیں

لوگ، گمنام ہوا کرتے ہیں

چوٹ، سینے پہ لگا کرتی ہے

شعر، الہام ہوا کرتے ہیں

نعیم اکرم ملک

 

کچھ کچا پکا کلام۔۔۔

(1)

تجھ  سے  لڑ  کر  جیتا  ہوں

سولی  چڑھ   کر   جیتا  ہوں

پیچھے   رہ  کر   ہارا   تھا

آگے   بڑھ   کر   جیتا   ہوں

(2)

پلک  جھپک  میں  کھو  سکتا  تھا

 ایسا   کچھ   بھی   ہو   سکتا  تھا

جگراتوں     کا     مارا     مجرم

سولی  پر  بھی   سو   سکتا   تھا

بنجر    آنکھوں     والا     پنچھی

آخر    کیسے    رو    سکتا   تھا؟

(3)

بیٹھے   بیٹھے   سر   کٹ   جاتے

کم  از  کم  کچھ  پر   کٹ   جاتے

ایسے   جیون   سے   بہتر   تھا

جا   کر   مقتل   پر   کٹ   جاتے

(4)

سمع   کا   دھوکا،   بصر   کا   دھوکا

عروج    پر    ہے   بشر   کا   دھوکا

فتح   کا   دھوکا،   نصر   کا   دھوکا

تمام    تیری     نظر     کا     دھوکا

آخری قطعہ میں تلفظ کا غلط استعمال کیا گیا تھا۔ توقیر عباس شاہ صاحب نے درستگی فرمائی، اسلئے ان پر لکیر پھیر رہا ہوں۔

گزشتہ کافی دنوں سے یہ چند نا مکمل غزلیں میرے ذہن میں تھیں، کسی صورت مکمل ہوتی نہ دکھیں تو میں نے ایسے ہی آپکی خدمت میں پیش کر دیں۔۔۔

انتہائوں کے بیچ زندہ ہوں

انتہائوں      کے     بیچ     زندہ     ہوں

کچھ  خدائوں  کے  بیچ    زندہ     ہوں

کوئی      انساں     نظر     نہیں     آتا

بس  انائوں   کے    بیچ    زندہ    ہوں

داستانوں   میں   سنا    کرتے    تھے

جن   بلائوں   کے   بیچ   زندہ   ہوں

معجزہ    اور   کسے    کہتے   ہیں؟

بد   دعائوں   کے    بیچ    زندہ   ہوں

کل  مداروں  سے  دشمنی  کی  تھی

اب   خلائوں  کے  بیچ   زندہ   ہوں

نعیم    بینائی    چھن     گئی     میری

ضو  فشائوں  کے  بیچ   زندہ     ہوں

نعیم اکرم ملک

مترنم غزلیں

ویڈیوز کی کوالٹی فارغ سی ہے، موبائل سے بنائی ہیں۔۔۔ کمرے میں روشنی بھی بس ٹھیک ہی تھی۔۔۔ بہر حال۔۔۔ ویڈیوز تو اپ لوڈ کر دی نا۔۔۔ کوئی دو ہفتے پہلے لکھی ہوئی غزلوں کو روک کے رکھنا اب میرے لئے خاصا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔ غزلوں کا ٹرانسکرپٹ ذیل میں درج ہے۔۔۔

میں  نے  پوچھا  سوال، کیسا  ہے؟

کچھ   بتا    تیرا   حال، کیسا    ہے؟

روز و شب کس طرح  گزارے  ہیں؟

اب     جہانِ     خیال     کیسا    ہے؟

تھا   تجسس  مجھے  پتہ  تو  چلے

تیرا   حسن   و   جمال   کیسا    ہے؟

اور پھر! کیسی    ہے    انا    تیری؟

تیرا    جاہ    و    جلال   کیسا   ہے؟

الجھا    الجھا    دکھا ئی دیتا   ہے

کس  نے  جکڑا  ہے، جال   کیسا   ہے؟

چھوڑ  جائوں  یہ  تری  خواہش  تھی

بھول    بھی    جا ملال    کیسا    ہے؟

گر    یقیں    ہے    میری    محبت   پر

لوٹ       آنا       محال،  کیسا      ہے؟

 

بس گردشِ دوراں سے ہی فرصت نہیں مِلی

ایسا  تو  نہیں  ہے  کہ  محبت   نہیں   ملی

گو دِل پذیر  لوگوں  سے  بھی  واسطہ  رہا

جو  دِل  پہ  گزر  جائے، قیامت   نہیں   مِلی

ہم  نے  حسین  چہروں  کی تاریخ چھان دی

لیکن  وفا   کی   کوئی   روایت   نہیں   مِلی

پھر  آج تعجب سے مجھے اُس نے یہ پوچھا

او  نعیم!   تیری   کوئی   شکایت   نہیں   مِلی

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے

کوئی حیوان چھپا بیٹھا ہے
ایک ہیجان چھپا بیٹھا ہے
اِس دمکتے ہوئے کاشانے میں
قصرِ ویران چھپا بیٹھا ہے

کیا خبر سُوٹ بُوٹ کے پیچھے
کیسا انسان چُھپا بیٹھا ہے
بن کے ایاز تیری محفل میں
دیکھ سُلطان چھپا بیٹھا ہے

خیر و شر کا تمام اِس دِل میں
ساز و سامان چھپا بیٹھا ہے
دیکھ کر تجھکو یقیں ہوتا ہے
تجھ میں بھگوان چھپا بیٹھا ہے

اٹھ گئی جگنوئوں سے پابندی
تو کہ انجان چھپا بیٹھا ہے
ایک اک جُنبشِ ابرو میں نعیم
لاکھ فرمان چھپا بیٹھا ہے

 

معذرت چاہتا ہوں، وقت کی کمی کے باعث اشعار کی فارمیٹنگ الائنمنٹ درست نہیں کر سکا۔

دائرے میں بھنور میں رہتے ہیں

دائرے میں، بھنور میں رہتے ہیں
لوگ جو اس نگر میں رہتے  ہیں
منزلوں   کا    نشاں    نہیں   ملتا
جانے  کیسے سفر میں رہتے ہیں

ہوش    ان     کو    مگر    نہیں    آتا
کس   دوا   کے   اثر  میں  رہتے  ہیں؟
منتشر      منتشر       خیال       انکے
شام  میں،  اور  سحر  میں  رہتے ہیں

سنگ    باری    کا    شوق    پالا    ہے
اور  شیشے  کے  گھر  میں  رہتے  ہیں

کچھ حقیقت ہے، کچھ فسانہ ہے

کچھ  حقیقت  ہے،  کچھ  فسانہ  ہے
یہ   بڑا    ہی   عجب   زمانہ   ہے

سارے    اعمال    دشمنوں   والے
صرف     انداز     دوستانہ     ہے

دیکھنے   میں‌   نئی   عمارت   ہے
اسکے    اندر    سبھی   پرانا   ہے

جانے  کب  دل  میں  اتر جاءے گا
آنکھ  میں  جس  کا  آنا   جانا   ہے

کیا  خبر  کون  یاد  رہ  جاءے
کیا پتہ کس کو بھول جانا  ہے

« Older entries