کچھ کچا پکا کلام۔۔۔

(1)

تجھ  سے  لڑ  کر  جیتا  ہوں

سولی  چڑھ   کر   جیتا  ہوں

پیچھے   رہ  کر   ہارا   تھا

آگے   بڑھ   کر   جیتا   ہوں

(2)

پلک  جھپک  میں  کھو  سکتا  تھا

 ایسا   کچھ   بھی   ہو   سکتا  تھا

جگراتوں     کا     مارا     مجرم

سولی  پر  بھی   سو   سکتا   تھا

بنجر    آنکھوں     والا     پنچھی

آخر    کیسے    رو    سکتا   تھا؟

(3)

بیٹھے   بیٹھے   سر   کٹ   جاتے

کم  از  کم  کچھ  پر   کٹ   جاتے

ایسے   جیون   سے   بہتر   تھا

جا   کر   مقتل   پر   کٹ   جاتے

(4)

سمع   کا   دھوکا،   بصر   کا   دھوکا

عروج    پر    ہے   بشر   کا   دھوکا

فتح   کا   دھوکا،   نصر   کا   دھوکا

تمام    تیری     نظر     کا     دھوکا

آخری قطعہ میں تلفظ کا غلط استعمال کیا گیا تھا۔ توقیر عباس شاہ صاحب نے درستگی فرمائی، اسلئے ان پر لکیر پھیر رہا ہوں۔

گزشتہ کافی دنوں سے یہ چند نا مکمل غزلیں میرے ذہن میں تھیں، کسی صورت مکمل ہوتی نہ دکھیں تو میں نے ایسے ہی آپکی خدمت میں پیش کر دیں۔۔۔