انتہائوں کے بیچ زندہ ہوں

انتہائوں      کے     بیچ     زندہ     ہوں

کچھ  خدائوں  کے  بیچ    زندہ     ہوں

کوئی      انساں     نظر     نہیں     آتا

بس  انائوں   کے    بیچ    زندہ    ہوں

داستانوں   میں   سنا    کرتے    تھے

جن   بلائوں   کے   بیچ   زندہ   ہوں

معجزہ    اور   کسے    کہتے   ہیں؟

بد   دعائوں   کے    بیچ    زندہ   ہوں

کل  مداروں  سے  دشمنی  کی  تھی

اب   خلائوں  کے  بیچ   زندہ   ہوں

نعیم    بینائی    چھن     گئی     میری

ضو  فشائوں  کے  بیچ   زندہ     ہوں

نعیم اکرم ملک