مترنم غزلیں

ویڈیوز کی کوالٹی فارغ سی ہے، موبائل سے بنائی ہیں۔۔۔ کمرے میں روشنی بھی بس ٹھیک ہی تھی۔۔۔ بہر حال۔۔۔ ویڈیوز تو اپ لوڈ کر دی نا۔۔۔ کوئی دو ہفتے پہلے لکھی ہوئی غزلوں کو روک کے رکھنا اب میرے لئے خاصا مشکل ہو رہا تھا۔۔۔ غزلوں کا ٹرانسکرپٹ ذیل میں درج ہے۔۔۔

میں  نے  پوچھا  سوال، کیسا  ہے؟

کچھ   بتا    تیرا   حال، کیسا    ہے؟

روز و شب کس طرح  گزارے  ہیں؟

اب     جہانِ     خیال     کیسا    ہے؟

تھا   تجسس  مجھے  پتہ  تو  چلے

تیرا   حسن   و   جمال   کیسا    ہے؟

اور پھر! کیسی    ہے    انا    تیری؟

تیرا    جاہ    و    جلال   کیسا   ہے؟

الجھا    الجھا    دکھا ئی دیتا   ہے

کس  نے  جکڑا  ہے، جال   کیسا   ہے؟

چھوڑ  جائوں  یہ  تری  خواہش  تھی

بھول    بھی    جا ملال    کیسا    ہے؟

گر    یقیں    ہے    میری    محبت   پر

لوٹ       آنا       محال،  کیسا      ہے؟

 

بس گردشِ دوراں سے ہی فرصت نہیں مِلی

ایسا  تو  نہیں  ہے  کہ  محبت   نہیں   ملی

گو دِل پذیر  لوگوں  سے  بھی  واسطہ  رہا

جو  دِل  پہ  گزر  جائے، قیامت   نہیں   مِلی

ہم  نے  حسین  چہروں  کی تاریخ چھان دی

لیکن  وفا   کی   کوئی   روایت   نہیں   مِلی

پھر  آج تعجب سے مجھے اُس نے یہ پوچھا

او  نعیم!   تیری   کوئی   شکایت   نہیں   مِلی