یومِ اقبال مبارک۔۔۔


فرشتوں کا گیت

عقل ہے بےزمام ابھی،  عشق  ہے  بے مقام ابھی

نقش   گرِ   ازل   ترا   نقش    ہے    ناتمام    ابھی

خلقِ  خد ا کی  گھات  میں رِند و فقیہہ و میر و پیر

تیرے جہاں میں ہے وہی گردش صبح و شام ابھی

تیرے امیر   مال   مست،تیرے فقیر   حال   مست

بندہ   ہے  کوچہ  گرد ابھی،خواجہ  بلند  بام ابھی

دانش   و  دین  و  علم  و  فن، بندگیء  ہوس تمام

عشق  گرہ  کشاے  کا  فیض  نہیں  ہے  عام   ابھی

جوھرِ  زندگی  ہے عشق، جوھرِ  عشق  ہے خودی

آہ   کہ   ہے   یہ   تیغِ   تیز،   پردگیء   نیام   ابھی


مُلا اور بہشت

میں  بھی  حاضر  تھا  وہاں  ضبطِ  سخن  کر  نہ   سکا

حق   سے   جب   حضرتِ   مُلا   کو   مِلا   حُکمِ  بہشت

عرض   کی   میں   نے   الٰہی    مری    تقصیر    معاف

خوش  نہ  آئیں  گے  اسے  حور  و شراب و  لبِ کشت

نہیں    فردوس    مقامِ     جدل    و    قال    و     اقوال

بحث   و  تکرار  اس   اللہ   کے   بندے   کی    سرشت

ہے    بدآموزیء    اقوام    و    مِلل    کام     اس    کا

اور  جنت   میں   نہ   مسجد،   نہ   کلیسا،   نہ   کُنِشت


روحِ ارضی آدم کا استقبال کرتی ہے

کھول   آنکھ،زمیں   دیکھ، فلک   دیکھ، فضا   دیکھ

مشرق  سے  ابھرتے  ہوئے  سورج  کو  ذرا  دیکھ

اُس  جلوہء  بے  پردہ  کو  پردوں  میں  چھپا  دیکھ

ایّامِ      جدا ئی      کے     ستم    دیکھ،جفا    دیکھ

بے تاب نہ ہو معرکہء بیم و رِجا دیکھ

ہیں  تیرے  تصرف  میں  یہ  بادل، یہ   گھٹائیں

یہ      گنبدِ     افلاک، یہ     خاموش      فضائیں

یہ    کوہ، یہ    صحرا، یہ   سمندر، یہ   ہوائیں

تھیں  پیشِ  نظر  کل  تو  فرشتوں کی    ادائیں

آئینہ  ایام  میں  آج  اپنی  ادا  دیکھ


سمجھے  گا  زمانہ  تیری  آنکھوں  کے  اشارے

دیکھیں گے تجھے دور سے گردوں کے ستارے

ناپید      تیرے      بحرِ      تخیل    کے     کنارے

پہنچیں  گے  فلک  تک  تری  آہوں  کے  شرارے

تعمیرِ  خودی  کر،اثرِ   آہِ رسا  دیکھ

خورشیدِ    جہاں   تاب کی   ضو   تیرے   شرر    میں

آباد     ہے    اک    تازہ    جہاں     تیرے    ہنر     میں

جچتے     نہیں    بخشے   ہوئے   فردوس   نظر   میں

جنت   تری   پنہاں    ہے    ترے    خونِ    جگر     میں

اے  پیکرِ  گِل  کوششِ  پیہم کی جزا دیکھ

نالندہ    تیرے    عود    کا    ہر    تار    ازل    سے

تو     جنسِ     محبت     کا    خریدار     ازل    سے

تو     پیرِ     صنم     خانہء     اسرار     ازل    سے

محنت   کش   و   خونریز   و   کم   آزار   ازل   سے

ہے  راکبِ  تقدیر جہاں تیری رضا دیکھ

یہ تمام غزلیں علامہ محمد اقبال کی آخری اردو کتاب بالِ جبریل سے لی گئی ہیں۔ بالِ جبریل کے بعد علامہ کی شاعری کے مجموعہ جات فارسی زبان میں ہیں۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: