دائرے میں بھنور میں رہتے ہیں

دائرے میں، بھنور میں رہتے ہیں
لوگ جو اس نگر میں رہتے  ہیں
منزلوں   کا    نشاں    نہیں   ملتا
جانے  کیسے سفر میں رہتے ہیں

ہوش    ان     کو    مگر    نہیں    آتا
کس   دوا   کے   اثر  میں  رہتے  ہیں؟
منتشر      منتشر       خیال       انکے
شام  میں،  اور  سحر  میں  رہتے ہیں

سنگ    باری    کا    شوق    پالا    ہے
اور  شیشے  کے  گھر  میں  رہتے  ہیں

Advertisements

کچھ حقیقت ہے، کچھ فسانہ ہے

کچھ  حقیقت  ہے،  کچھ  فسانہ  ہے
یہ   بڑا    ہی   عجب   زمانہ   ہے

سارے    اعمال    دشمنوں   والے
صرف     انداز     دوستانہ     ہے

دیکھنے   میں‌   نئی   عمارت   ہے
اسکے    اندر    سبھی   پرانا   ہے

جانے  کب  دل  میں  اتر جاءے گا
آنکھ  میں  جس  کا  آنا   جانا   ہے

کیا  خبر  کون  یاد  رہ  جاءے
کیا پتہ کس کو بھول جانا  ہے