دشت میں شہر بساتا کیوں ہے


نصیحت

دشت   میں  شہر  بساتا   کیوں  ہے
آنکھ میں خواب   سجاتا   کیوں  ہے
حالِ  دِل   مجھکو  سناتا   کیوں  ہے
جو   گیا    اُسکو   بُلاتا   کیوں   ہے

چند  لمحے   کو   تو  سو  لینے   دے
رات بھر  رو  کے  جگاتا  کیوں  ہے
مانا  کہ   زخم    تیرے    گہرے  ہیں
بے وجہ مجھ  کو  دکھاتا   کیوں  ہے

بات  کڑوی  ہے مگر غور  سے  سُن
آنکھ اب  مجھ  سے  چُراتا  کیوں  ہے
دوست   یہ    شعر   بڑی   دولت   ہیں
کور   نظروں    پہ   لُٹاتا   کیوں   ہے

چھوڑ  بھی،   ہو گیا   جو   ہونا   تھا
اب   بھلا    بات   بڑھاتا   کیوں   ہے
نعیم  میں   دوست   ہوں    تیرا    پاگل
مجھکو  غیروں  میں  مِلاتا  کیوں ہے

Advertisements

1 تبصرہ

  1. altafgohar said,

    مارچ 4, 2010 بوقت: 4:04 شام

    Excellent


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: