ایک تازہ زمین ڈھونڈتا ہوں

ایک     تازہ    زمین    ڈھونڈتا   ہوں
کوئی  تجھ  سا  حسین  ڈھونڈتا   ہوں
جسکی   پیشانی   پہ   تارے   چمکیں
کہکشاں    کا    مکین    ڈھونڈتا  ہوں

خامشی    کی    صدا    سمجھتا    ہو
شخص   مخلص  فطین  ڈھونڈتا  ہوں
ڈھوندنے  سے  خُدا  بھی   ملتا   ہے
کر کے  خود   پر  یقین  ڈھونڈتا  ہوں

میرے   رازوں   کو   امانت   رکھے
ایک   صادق    امین    ڈھونڈتا   ہوں

جواب نصیحت

جواب نصیحت

جانے دے شور  مچاتا  کیوں  ہے
چُپ بھلا مجھکو کراتا  کیوں  ہے
عقل کے گھوڑے بھگاتا کیوں ہے
خاک   اسقدر   اُڑاتا   کیوں   ہے

دشت میں شہر بسا لوں گا میں
حوصلہ  میرا  گھٹاتا کیوں ہے
آنکھ میں خواب سجا لینے دے
آنکھ میں آگ  لگاتا  کیوں  ہے

بڑی محنت سے جہاں  چھوڑا  ہے
پھر مجھے اس سے مِلاتا کیوں ہے
میں  نے  مانا  تو  میرا  محسن  ہے
بات  بے    بات   جتاتا   کیوں   ہے

 نیند   آنی   ہو  تو  آ  جاتی  ہے
مجھ  پہ   الزام  لگاتا  کیوں  ہے
زخم جتنے بھی میرے گہرے ہیں
جا کے اوروں کو بتاتا  کیوں  ہے

چھوڑ دوں کیسے جو ہو گزری ہے
یاد  رکھنے  دے  بُھلاتا  کیوں   ہے
نعیم   کے   دوست   آفریں  تجھ  پر
دشمنی   مجھ سے نبھاتا   کیوں  ہے

دشت میں شہر بساتا کیوں ہے

نصیحت

دشت   میں  شہر  بساتا   کیوں  ہے
آنکھ میں خواب   سجاتا   کیوں  ہے
حالِ  دِل   مجھکو  سناتا   کیوں  ہے
جو   گیا    اُسکو   بُلاتا   کیوں   ہے

چند  لمحے   کو   تو  سو  لینے   دے
رات بھر  رو  کے  جگاتا  کیوں  ہے
مانا  کہ   زخم    تیرے    گہرے  ہیں
بے وجہ مجھ  کو  دکھاتا   کیوں  ہے

بات  کڑوی  ہے مگر غور  سے  سُن
آنکھ اب  مجھ  سے  چُراتا  کیوں  ہے
دوست   یہ    شعر   بڑی   دولت   ہیں
کور   نظروں    پہ   لُٹاتا   کیوں   ہے

چھوڑ  بھی،   ہو گیا   جو   ہونا   تھا
اب   بھلا    بات   بڑھاتا   کیوں   ہے
نعیم  میں   دوست   ہوں    تیرا    پاگل
مجھکو  غیروں  میں  مِلاتا  کیوں ہے