منظرِ عام تک نہیں پہنچا


منظر      عام      تک      نہیں     پہنچا
جُرم     الزام     تک      نہیں      پہنچا

ایک    خاکہ    سا   ہے   خیالوں   میں
شخص   سے    نام   تک   نہیں   پہنچا

ذہن    الجھا    ہوا    ہے   لفظوں   میں
اصل     پیغام     تک      نہیں     پہنچا

جان   بخشی   کا   کوئی   بھی    حیلہ
میرے     ابہام     تک     نہیں     پہنچا

تیری  محفل  میں  جو  بھی  دور  چلا
تشنئہ     کام     تک     نہیں      پہنچا

دِل کو  اب  بھی  اُمید  ہے  تجھھ  سے
دیگر    اصنام     تک     نہیں     پہنچا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

2 تبصرے

  1. Jafar said,

    فروری 8, 2010 بوقت: 3:49 شام

    بہت عمدہ۔۔۔

  2. ریاض شاہد said,

    فروری 8, 2010 بوقت: 6:12 شام

    خوب ہے


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: