اپنے قدموں کے نشاں دیکھتا ہوں

اپنے قدموں کے نشاں دیکھتا ہوں
وقت  لے  آیا   کہاں   دیکھتا  ہوں
جیت   اور   ہار   کے  تقابل  میں
سود  کو چھوڑ زیاں  دیکھتا  ہوں

آس  جب  ٹوٹ  پھوٹ  جاتی  ہے
پھر سے جذبات جواں دیکھتا ہوں
دیر  سے  سفر  کئیے   جاتا   ہوں
دور  منزل  کا  نشاں  دیکھتا  ہوں

اب  تو  انجم  بھی  قریں  لگتے  ہیں
اِک  نرالا   ہی   جہاں   دیکھتا   ہوں
وہ   جو   کل   پاس   ہوا   کرتا   تھا
گرد    میں   آج   نہاں   دیکھتا   ہوں

قافلہ     اجل     کے     پروانوں     کا
موج   در   موج   رواں   دیکھتا   ہوں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

یہ میری آخری تحریر نہ ہو

یہ   میری   آخری   تحریر   نہ   ہو
آج    مرنا    میری    تقدیر    نہ   ہو
روزِ  اول   سے   ہی   ویران   رہے
ایسی   کوئی   کہیں   تعمیر    نہ   ہو

آنکھ  وہ   خواب   سدا   دیکھتی   ہے
جسکی   ممکن   کبھی   تعبیر   نہ  ہو
موت    کا    آنا    اک    حقیقت    ہے
بے   سبب   شاعرا   دلگیر   نہ    ہو

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

قطعات

قطعات

1
قید    میں   زندگی   گزارتے   ہیں
قرض   یوں    کونسا   اُتارتے   ہیں؟

عمر  بھر  گھر  سے  دور رہ رہ کر
کیا  بگاڑا  تھا،  کیا   سنوارتے   ہیں؟

2
خاک  میں  خون  کہاں  چھپتا  ہے
آنکھ  میں   آنسو   کہاں   رُکتا  ہے

آندھیوں   کے   بُرے   زمانے   میں
ٹوٹتا   جو   نہیں   وہ   جُھکتا   ہے

3
درد  جو  دِل  میں  ہے  پھیلا  دوں  گا
سارے  عالم   کو   دِل   بنا   دوں   گا

منہ  چھپاتے  پھرو  گے خود سے بھی
آئینہ   جب   کبھی    دکھا    دوں    گا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

میں سمجھتا رہا کہ یہ رباعیات ہیں۔ جبکہ یہ تو قطعات ہے۔ معلومات میں اس اضافے کے لئے میں محمد وارث صاحب کا شکر گزار ہوں۔ وارث صاحب کا بلاگ ملاحظہ ہو
muhammad-waris.blogspot.com

ایک غزل، ہمارے آج کے نام

ایک غزل، ہمارے آج کے نام

دور   رہتے   ہیں   پرے    رہتے    ہیں

لوگ   لوگوں   سے   ڈرے   رہتے  ہیں

موت   کا   خوف   ہے  لیکن  پھر  بھی

سارے    بازار   بھرے     رہتے    ہیں

روح   کا  کیا    ہے    اِسے    قتل  کرو

جسم   کے   دام    کھرے    رہتے   ہیں

کام    پہ    عمر      گزر    جاتی    ہے

طاق  میں   خواب   دھرے   رہتے  ہیں

وقت   کے    ساتھ   بہے    جاتے    ہیں

گویا   جیتے    جی    مرے   رہتے  ہیں

نعیم   گلشن    میں    خزاں    آ   جاءے

آس     کے    پیڑ    ہرے    رہتے   ہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

منظرِ عام تک نہیں پہنچا

منظر      عام      تک      نہیں     پہنچا
جُرم     الزام     تک      نہیں      پہنچا

ایک    خاکہ    سا   ہے   خیالوں   میں
شخص   سے    نام   تک   نہیں   پہنچا

ذہن    الجھا    ہوا    ہے   لفظوں   میں
اصل     پیغام     تک      نہیں     پہنچا

جان   بخشی   کا   کوئی   بھی    حیلہ
میرے     ابہام     تک     نہیں     پہنچا

تیری  محفل  میں  جو  بھی  دور  چلا
تشنئہ     کام     تک     نہیں      پہنچا

دِل کو  اب  بھی  اُمید  ہے  تجھھ  سے
دیگر    اصنام     تک     نہیں     پہنچا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

پہلے والی بات نہیں ہے

پہلے    والی    بات      نہیں     ہے
بادل    ہیں    برسات      نہیں     ہے

ہجر   بھری    ہے     بپتا      ساری
وصل  کا  دِن  اور   رات   نہیں  ہے

ذرّہ   ذرّہ      بکھر       رہا     ہوں
کچھ   بھی    میرے   ہات   نہیں ہے

عشق   نہ   کھیل  نہ   سودے   بازی
جیت    نہیں   ہے،  مات   نہیں   ہے

دھوپ   میں   آ   کر   ہم   نے   جانا
سایا  تک    بھی    ساتھ    نہیں   ہے

مٹی   میں   سب    مِل    جائے    گا
لوگوں     کو      اثبات     نہیں     ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

ہجر کاٹا وصال دیکھیں گے

ہجر   کاٹا    وصال   دیکھیں   گے

تیرے   سارے  کمال  دیکھیں   گے

آنکھھ میں آنکھھ  ڈال  دیکھیں  گے

جو  بھی   آیا   وبال  دیکھیں   گے

سامنے   ہم   تجھے   بٹھائیں   گے

خوب  تیرا   جمال   دیکھیں    گے

تیری  اُلجھی لٹوں سے کھیلیں  گے

چہرہء   بے   مثال    دیکھیں    گے

شام  کو   صبح   کو    بہانوں    سے

تیری  مستانہ    چال     دیکھیں    گے

سانس  رُک   سا   گیا   تھا  سینے  میں

اِسکو   پھر   سے   بحال   دیکھیں   گے

بات   جو   کہتے   ہو   وہ    مانیں    گے

کر     کے    اپنا    خیال    دیکھیں     گے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

محبت کو بچانا ہے

محبت         کو        بچانا        ہے
تمہیں     سب     کچھ       بتانا    ہے
جسے     ڈر       کر       دبایا      تھا
وہی        نقطہ       اٹھانا         ہے

کٹھن      یہ        آزمائش           ہے
مجھے     خود     کو     ہرانا      ہے
عبادت        گاہِ         الفت          سے
ہر     اِک     بُت     کو     ہٹانا      ہے

جو     میرے        پاس     باقی     ہے
سبھی      تم       پر        لٹانا        ہے
محبت         کو            مٹاتا         ہے
بڑا          ظالم            زمانہ        ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔