کرب کا رازداں،کوئی بھی نہیں


کرب      کا       رازداں،     کوئی    بھی   نہیں
ضبط    سا     امتحاں،     کوئی     بھی     نہیں
مرگ    ہے    نوحہ    خواں    کوئی   بھی  نہیں
چپ   ہیں   سب،  بے   زُباں   کوئی   بھی   نہیں

چلتا       پھرتا     بھی     لاش     لگتا       ہے
جسم    میں    جیسے   جاں،  کوئی   بھی   نہیں
جس       جگہ       آجکل        بسیرا         ہے
میں   ہوں  بس  اور  واں   کوئی    بھی      نہیں

اسقدر   بے      وجود      ہوں       اب        تو
نام    ہے    پر     نشاں      کوئی     بھی      نہیں
اُڑنے   والے    تو    اُڑ     ہی      جاتے       ہیں
ناپتا      آسماں،        کوئی         بھی          نہیں

مُڑ    کے    دیکھا    تو     دِل    ہی    ٹوٹ     گیا
ساتھھ    میں     کارواں      کوئی     بھی       نہیں
کئی     شہروں       سے      نعیم      گزرا      ہوں
پر       میرا       آشیاں،       کوئی      بھی       نہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

1 تبصرہ

  1. جنوری 26, 2010 بوقت: 2:33 شام

    نعیم کامران صاحب
    شاعری اچھی ہے لگے رہیے انشا اللہ کسی دن خوب تر ہو جائے گی


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: