بات خود تک ہی رکھا کرتے ہیں


بات    خود    تک   ہی   رکھا   کرتے   ہیں
لوگوں    کو     ٹال      دیا      کرتے     ہیں
دِل    آزاری     نہیں      ہوتی      ہم       سے
جو  بھی ہو   ہنس   کے   مِلا  کرتے     ہیں

یہ    حسینوں    کی   بُری      عادت       ہے
حوصلہ    دے   کے    دغا    کرتے      ہیں
آسمانوں       سے       جواب       آتا        نہیں
ہم     تو     ہر    روز    دُعا    کرتے      ہیں

سریا   آ    جاتا    ہے    جب    گردن      میں
مُنہ    کے    بل    لوگ    گِرا    کرتے    ہیں
جاگنے   والوں    کی    آنکھوں    میں     نعیم
بے    پنہ      سِحر       ہوا       کرتے      ہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: