گیا انوکھی ادائیں دے کر


گیا        انوکھی       ادائیں         دے        کر
خزاں      کا    موسم     بلا ئیں      دے     کر
وہ   کچھھ   نہ   کچھھ  تو   پرکھھ    رہا   تھا
مجھے     ستا      کر      سزائیں    دے    کر

بہار      کو        چند        اُداس        پنچھی
بُلا      رہے      تھے     صدائیں     دے   کر
یہ       گھر     جلایا    نجانے     کِس     نے
لگا    کے     تیلی،     ہوائیں      دے       کر

شفا    بھی    اِک     دِن     نصیب     ہو    گی
کرو    تو     کوشش     دوائیں     دے       کر
نعیم     تُجھھ     کو     سکوں     مِلے      گا
وفا       کے       بدلے     انائیں      دے    کر

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: