خزاں کی آمد


اپنی شاعری کو دوستوں تک پہنچانے کا ایک ذریعہ۔ مجھے پتہ ہے ایسا کرنے سے میری کتاب نہیں بِکے گی، لیکن یار وہ تو جب چھپے گی تب دیکھی جا ئے گی۔ شاعری تو میں پہلے بھی کرتا تھا لیکن وہ ایک بچگانہ سا شوق تھا جو کہ جوان ہوتے وقت کہیں راستے میں ہی کھو گیا۔ کبھی کبھار لکھا بھی لیکن باقاعدگی نہیں تھی۔ اِس عید (دو ہزار نو ) پر دوبارہ لکھنا شروع کیا۔ بنیادی وجوہات میں سب سے اہم میری اپنی ذہنی حالت اور حلقہ ارباب ذوق کا بڑا کردار ہے کیونکہ میں نے کچھ ہفتے پہلے وہاں جانا شروع کیا تھا۔ اب کی بار موضوعات لڑکپن سے مختلف ہیں، اور مجھے امید ہے کہ خزاں کا یہ سفر یونہی جاری و ساری رہے گا۔ آغاز اُن دنوں لکھی گئی غزلوں سے کرتا ہوں۔

غزل
روز      میدان      نیا       لگتا      ہے

کوءی     بہتان     نیا     لگتا        ہے
سورمے     بات    بڑھا    دیتے      ہیں
ایک      گھمسان     نیا     لگتا      ہے
تختے   سے   لاش   اتر   جاتی      ہے
زندہ      انسان     نیا      لگتا        ہے
اک     عجب   شہر  بھی  دیکھا  ہم  نے
ہو      کے     ویران    نیا    لگتا    ہے
روحِ       تحریر     وہی      رہتی     ہے
فقط        عنوان      نیا      لگتا      ہے

غزل
روز  و شب بے شمار ہوتے   ہیں
حادثے    بار    بار   ہوتے     ہیں
نیند   تو  اُنکو   بھی  آ جاتی   ہے
جو  بڑے  بے  قرار   ہوتے    ہیں
عشق  وہ  اس طرح  سے  کرتا ہے
جس   طرح   کاروبا ر  ہوتے   ہیں
تیرے   نینوں   سے   پتہ  چلتا  ہے
روز     ہی    اشکبار    ہوتے   ہیں

غزل
تشنہء    تعبیر    خواب    رکھتا     ہوں
زیرِ     تعمیر     خواب     رکھتا     ہوں
آسمانوں      کی     طرف    اڑتے    ہیں
پا بہ     زنجیر    خواب   رکھتا      ہوں
جب  سے آنکھوں  میں بسا ہے    کوءی
مثلِ      تصویر      خواب    رکھتا     ہوں
اور  تو   پاس   میرے   کچھ   بھی     نہیں
میری     جاگیر      خواب     رکھتا      ہوں
مجھ  سے  نالاں ہیں   زمانے   کے  فرعون
میری     تقصیر     خواب       رکھتا     ہوں

والسلام
نعیم اکرم ملک

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

1 تبصرہ

  1. GHAFFAR ANWAR said,

    جنوری 23, 2010 بوقت: 5:21 صبح

    NICE MAN
    ACHEE HA
    COZ MUJAY TU NEW SAAY NEW STUDY KRNAY KA SHOOQ RAHA HA


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: