سحر ہے یا نشہ محبت ہے

سحر  ہے  یا   نشہ   محبت   ہے
زندگی   کی   وجہ    محبت   ہے

مانتے   ہیں    خطا    ہماری   ہے
تم   سے جو  بے  پنہ  محبت  ہے

اُن میں اور ہم  میں  فرق  اتنا  ہے
نفرتوں  کی    جگہ    محبت    ہے

کون   وجہیں     تلاش    کرتا  ہے
ہم   کو   بس   ہے   پتہ  محبت  ہے

تیری   سادہ    ادا   سے   لگتا   ہے
سادگی    کا    صلہ     محبت    ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

Advertisements

ایک سوال

نثر پارے

1
آئینے کی داستاں
کرچیوں سے پوچھنا
ظلم نہیں تو کیا ہے؟

2
خستہ حال روحوں کے
زخم اگر چُھپا دیں تو
درد کم نہیں ہوتا

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

محبت کو بچانا ہے، تمہیں سب کچھ بتانا ہے

محبت       کو        بچانا         ہے
تُمہیں    سب     کچھ     بتانا     ہے

جسے      ڈر     کر     دبایا      تھا
وہی      نُقطہ        اٹھانا         ہے

کٹھن      یہ       آزمائش         ہے
مُجھے   خود    کو    ہرانا       ہے

عبادت        گاہِ        الفت       سے
ہر     اِک     بُت    کو    اُٹھانا   ہے

بے    وجہ       بیر       کرتا     ہے
بڑا        ظالم          زمانہ        ہے

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

کرب کا رازداں،کوئی بھی نہیں

کرب      کا       رازداں،     کوئی    بھی   نہیں
ضبط    سا     امتحاں،     کوئی     بھی     نہیں
مرگ    ہے    نوحہ    خواں    کوئی   بھی  نہیں
چپ   ہیں   سب،  بے   زُباں   کوئی   بھی   نہیں

چلتا       پھرتا     بھی     لاش     لگتا       ہے
جسم    میں    جیسے   جاں،  کوئی   بھی   نہیں
جس       جگہ       آجکل        بسیرا         ہے
میں   ہوں  بس  اور  واں   کوئی    بھی      نہیں

اسقدر   بے      وجود      ہوں       اب        تو
نام    ہے    پر     نشاں      کوئی     بھی      نہیں
اُڑنے   والے    تو    اُڑ     ہی      جاتے       ہیں
ناپتا      آسماں،        کوئی         بھی          نہیں

مُڑ    کے    دیکھا    تو     دِل    ہی    ٹوٹ     گیا
ساتھھ    میں     کارواں      کوئی     بھی       نہیں
کئی     شہروں       سے      نعیم      گزرا      ہوں
پر       میرا       آشیاں،       کوئی      بھی       نہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

بات خود تک ہی رکھا کرتے ہیں

بات    خود    تک   ہی   رکھا   کرتے   ہیں
لوگوں    کو     ٹال      دیا      کرتے     ہیں
دِل    آزاری     نہیں      ہوتی      ہم       سے
جو  بھی ہو   ہنس   کے   مِلا  کرتے     ہیں

یہ    حسینوں    کی   بُری      عادت       ہے
حوصلہ    دے   کے    دغا    کرتے      ہیں
آسمانوں       سے       جواب       آتا        نہیں
ہم     تو     ہر    روز    دُعا    کرتے      ہیں

سریا   آ    جاتا    ہے    جب    گردن      میں
مُنہ    کے    بل    لوگ    گِرا    کرتے    ہیں
جاگنے   والوں    کی    آنکھوں    میں     نعیم
بے    پنہ      سِحر       ہوا       کرتے      ہیں

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

گیا انوکھی ادائیں دے کر

گیا        انوکھی       ادائیں         دے        کر
خزاں      کا    موسم     بلا ئیں      دے     کر
وہ   کچھھ   نہ   کچھھ  تو   پرکھھ    رہا   تھا
مجھے     ستا      کر      سزائیں    دے    کر

بہار      کو        چند        اُداس        پنچھی
بُلا      رہے      تھے     صدائیں     دے   کر
یہ       گھر     جلایا    نجانے     کِس     نے
لگا    کے     تیلی،     ہوائیں      دے       کر

شفا    بھی    اِک     دِن     نصیب     ہو    گی
کرو    تو     کوشش     دوائیں     دے       کر
نعیم     تُجھھ     کو     سکوں     مِلے      گا
وفا       کے       بدلے     انائیں      دے    کر

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی  اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔

خزاں کی آمد

اپنی شاعری کو دوستوں تک پہنچانے کا ایک ذریعہ۔ مجھے پتہ ہے ایسا کرنے سے میری کتاب نہیں بِکے گی، لیکن یار وہ تو جب چھپے گی تب دیکھی جا ئے گی۔ شاعری تو میں پہلے بھی کرتا تھا لیکن وہ ایک بچگانہ سا شوق تھا جو کہ جوان ہوتے وقت کہیں راستے میں ہی کھو گیا۔ کبھی کبھار لکھا بھی لیکن باقاعدگی نہیں تھی۔ اِس عید (دو ہزار نو ) پر دوبارہ لکھنا شروع کیا۔ بنیادی وجوہات میں سب سے اہم میری اپنی ذہنی حالت اور حلقہ ارباب ذوق کا بڑا کردار ہے کیونکہ میں نے کچھ ہفتے پہلے وہاں جانا شروع کیا تھا۔ اب کی بار موضوعات لڑکپن سے مختلف ہیں، اور مجھے امید ہے کہ خزاں کا یہ سفر یونہی جاری و ساری رہے گا۔ آغاز اُن دنوں لکھی گئی غزلوں سے کرتا ہوں۔

غزل
روز      میدان      نیا       لگتا      ہے

کوءی     بہتان     نیا     لگتا        ہے
سورمے     بات    بڑھا    دیتے      ہیں
ایک      گھمسان     نیا     لگتا      ہے
تختے   سے   لاش   اتر   جاتی      ہے
زندہ      انسان     نیا      لگتا        ہے
اک     عجب   شہر  بھی  دیکھا  ہم  نے
ہو      کے     ویران    نیا    لگتا    ہے
روحِ       تحریر     وہی      رہتی     ہے
فقط        عنوان      نیا      لگتا      ہے

غزل
روز  و شب بے شمار ہوتے   ہیں
حادثے    بار    بار   ہوتے     ہیں
نیند   تو  اُنکو   بھی  آ جاتی   ہے
جو  بڑے  بے  قرار   ہوتے    ہیں
عشق  وہ  اس طرح  سے  کرتا ہے
جس   طرح   کاروبا ر  ہوتے   ہیں
تیرے   نینوں   سے   پتہ  چلتا  ہے
روز     ہی    اشکبار    ہوتے   ہیں

غزل
تشنہء    تعبیر    خواب    رکھتا     ہوں
زیرِ     تعمیر     خواب     رکھتا     ہوں
آسمانوں      کی     طرف    اڑتے    ہیں
پا بہ     زنجیر    خواب   رکھتا      ہوں
جب  سے آنکھوں  میں بسا ہے    کوءی
مثلِ      تصویر      خواب    رکھتا     ہوں
اور  تو   پاس   میرے   کچھ   بھی     نہیں
میری     جاگیر      خواب     رکھتا      ہوں
مجھ  سے  نالاں ہیں   زمانے   کے  فرعون
میری     تقصیر     خواب       رکھتا     ہوں

والسلام
نعیم اکرم ملک

جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں۔ مصنف کے کام کے کسی بھی حصے کی فوٹو کاپی، سکیننگ کسی بھی قسم کی اشاعت مصنف کی اجازت کے بغیر نہیں کی جا سکتی۔